Listed Price: Rs. 200, US $ 18
Our Price: Rs. 120
Shipment charges will be applied.

How to ORDER?

 

Pages: 190

Year: 2011

Binding: Hard

Size: 23"x36"/16

ISBN: 978-969-9400-19-3

Publisher: Al-Fath Publications

آسان عربی گرامر

ام انس

Aasan Arabi Grammar, Umm e Anas

عربی زبان کی اہمیت اور اَفادیت سے کسی کو اِنکار نہیں۔ یہ قرآن حکیم اور حدیث کی زبان ہے، جن کو پڑھنے، سمجھنے، سیکھنے اور سکھانے پر اِسلام کی تبلیغ کا انحصار ہے۔ عربی الفاظ اور عربی عبارت کو سمجھے بغیر قرآن کے قاری کا قرآن کی روح تک پہنچنا مشکل ہے۔ اِس کتاب میں عربی گرامر کے زیادہ سے زیادہ قواعد کا اِختصار کے ساتھ احاطہ کیا گیا ہے، تاکہ طلبہ کو ایک مضبوط بنیاد میسر آ سکے۔ مشکل اصطلاحوں اور تعریفوں سے گریز کیا گیا ہے۔ بات کو آسان الفاظ اور مثالوں کے ذریعے سمجھانے کی کوشش کی گئی ہے۔ اِس کتاب میں زیادہ تر مثالیں قرآن ہی سے لی گئی ہیں جس سے کتاب پڑھنے والے کا تعلق قرآن حکیم کے ساتھ مضبوط ہو سکتا ہے۔یہ کتاب سکولوں اور کالجوں کے طلبہ و طالبات کی ضرورت کو بھی احسن طریقے سے پورا کر سکتی ہے۔ 

 

 


Table of Contents | فہرست

Table of Contents is in PDF Format.
 

 


Preface | آغازِ سخن

عربی زبان کی اہمیت اور اَفادیت سے کسی کو اِنکار نہیں۔ قطع نظر اِس کے کہ یہ زبان اپنی وسعت و جامعیت، فصاحت و بلاغت، شیرینی و لطافت، اپنے منفرد ادبی مقام اور دیگر بیشمار خوبیوں اور خواص کی حامل ہے، اس کی اہمیت اِس وجہ سے ہے کہ یہ قرآن حکیم اور حدیث کی زبان ہے، جن کو پڑھنے، سمجھنے، سیکھنے اور سکھانے پر اِسلام کی تبلیغ کا انحصار ہے۔ ہر مسلمان، جو براہِ راست دین کا مطالعہ کرنا چاہتا ہے، اُس کو لامحالہ عربی زبان کا مطالعہ کرنا پڑتا ہے۔ عربی الفاظ اور عربی عبارت کو سمجھے بغیر قرآن کے قاری کا قرآن کی روح تک پہنچنا مشکل ہے، حتیٰ کہ نماز، جو کہ روزانہ کا وظیفہ ہے، وہ بھی عربی زبان ہی میں پڑھنا فرض ہے۔

انگریزی زبان کو چونکہ سکولوں میں لازمی بنایا گیا تھا اس لئے اس کی ترویج و اشاعت کے لئے بیشمار گرامر اور کمپوزیشن کی کتابیں لکھی گئیں، اس کو آسان بنانے کے لئے لوگوں نے بہت کام کیا، اور اب اَن گنت کتابیں مارکیٹ میں موجود ہیں۔ اس کے مقابلے میں اگر دیکھا جائے تو سکولوں اور کالجوں میں عموماً ایک ہی عربی گرامر اور کمپوزیشن ہے جس کو سالہا سال سے پڑھایا جا رہا ہے، البتہ ایسا ضرور ہوا کہ دین کا دَرد رکھنے والے لوگوں نے قرآن کے لئے گرامر کی بہت سی چھوٹی چھوٹی کتابیں لکھیں، بہترین لفظی ترجمے شائع کیے جو صرف عربی مدرسوں تک یا قرآن فہمی کے شائقین تک محدود ہیں۔

زیرنظر کتاب ان اسباق پر مشتمل ہے جو میں نے انفرادی طور پر طالبات کو گھر پر پڑھائے اور بعد میں زرعی یونیورسٹی میں عربی ڈپلومہ کورس، عائشہ عربی اکیڈمی، فیصل آباد میں فاضل عربی کی کلاسز اور جامعۃ المحصنٰت، لاہور میں وفاق المدارس کے تحت دو سالہ کورس اور مختلف دیگر قرآنی کلاسز میں پڑھائے۔ یوں گذشتہ ۲۵ سالوں کے دوران طالبات کی طرف سے ان کو کتابی شکل میں شائع کرنے کا بارہا مطالبہ ہوا۔ اس کی چند نمایاں خصوصیات یہ ہیں:

اس کتاب میں اِس بات کی کوشش کی گئی ہے کہ گرامر کے زیادہ سے زیادہ قواعد کا اِختصار کے ساتھ احاطہ کیا جائے، تاکہ طلبہ کو ایک مضبوط بنیاد میسر آ جائے۔ پھر اگر وہ تفصیل دیکھنا چاہیں تو دوسری کتب سے استفادہ کریں۔ یعنی یہ ایک ابتدائی گرامر ہے جو مبتدی کی تمام ضروریات کو پورا کرتی ہے۔

اس کتاب میں مشکل اصطلاحوں اور تعریفوں سے گریز کیا گیا ہے۔ بات کو آسان الفاظ اور مثالوں کے ذریعے سمجھانے کی کوشش کی گئی ہے۔

انگریزی زبان میں جس طرح Tenses سکھائے جاتے ہیں، افعال کو اُسی طرح سکھانے کی کوشش کی گئی ہے۔

قرآن کریم کا لفظی ترجمہ پڑھنے کے بعد طلبہ میں ایک فطری شوق یہ پیدا ہو جاتا ہے کہ گرامر سیکھی جائے۔ ایسے بیشمار لوگوں کے لئے یہ کتاب، انشاء اللہ، بہت مفید ثابت ہو سکتی ہے۔ 

اس کتاب میں زیادہ تر مثالیں قرآن ہی سے لی گئی ہیں جس سے کتاب پڑھنے والے کا تعلق قرآن حکیم کے ساتھ مضبوط ہو سکتا ہے۔

اکثر کتب کے اندر حل شدہ مشقیں دی جاتی ہیں جس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ طلبہ ان کو زبانی رَٹ لیتے ہیں اور خود سے اَخذ کرنے اور سمجھنے کی صلاحیت پیدا نہیں ہوتی۔ لہٰذا اِس کتاب میں ضروری چیزوں کو خط کشیدہ کر کے صرف نشاندہی کر دی ہے، اب یہ استاد کا کام ہے کہ وہ طلبہ سے خود اَخذ کروائے۔

یہ کتاب سکولوں اور کالجوں کے طلبہ و طالبات کی ضرورت کو بھی احسن طریقے سے پورا کر سکتی ہے۔ توقع ہے کہ اس کے پڑھنے سے ان کے اندر عربی زبان میں دلچسپی پیدا ہو گی اور اِس زبان سے اُن کی دُوری ختم ہو گی۔

اس کتاب کی اشاعت میں اس بات کو مدّنظر رکھا گیا ہے کہ خوبصورت اور موٹے الفاظ میں لکھا جائے تاکہ ایک ہی نظر میں بات واضح ہو جائے اور پڑھنے اور سمجھنے میں زیادہ دِقت اور مشقت نہ کرنی پڑے۔

اس کتاب کی تالیف میں صرف ایک ہی مقصد اور جذبہ پیشِ نظر رہا ہے کہ کسی طرح نسلِ نو کی رسائی عربی زبان کے ذریعے سے قرآن و حدیث تک ہو جائے۔ یہ ایک ابتدائی کوشش ہے۔ ہو سکتا ہے کہ اہلِ علم اس میں بہت سے نقائص محسوس کریں۔ ان سے یہ گزارش ہے کہ اس بارے میں میری رہنمائی کے لئے وہ اپنی رائے ضرور دیں۔

 

یہ کتاب پہلی مرتبہ جنوری ۱۹۹۷ء میں شائع ہوئی تھی۔ اُس کے بعد اِس کے متعدد ایڈیشن شائع ہوئے۔ اب ایک عرصے سے اس کی طباعت نہیں ہوئی تھی، تاہم طلبہ و طالبات، نیز دیگر شوق رکھنے والے قارئین کا اصرار تھا کہ اسے شائع کیا جائے۔ اس کام کا بیڑہ ہمارے محترم جناب صفدر ملک، منیجر الفتح پبلی کیشنز، راولپنڈی نے اٹھایا اور کتاب کی ازسرِنو کمپوزنگ کر کے اشاعت کا اہتمام کیا۔ اللہ تعالیٰ انہیں اس کی جزا دے۔

اللہ رب العزت سے دعا ہے کہ میری اس انتہائی حقیر کوشش کو اپنی بارگاہ میں شرفِ قبولیت بخشے اور اِس کو آخرت میں میرے اور میرے والدین، نیز دیگر اہلِ خانہ کے لئے مغفرت اور بخشش کا بہانہ بنا لے۔ آمین

امّ انس

Related Titles